کیا ارطغرل سے جان چھوٹے گی ؟

پرہفیسر پرویز ہود بھائی

قبائلی سازشوں، خون، قتل و غارت گری اور مذہبی محاورات میں لپٹی ترکی کی ڈرامہ سیریز مسلسل پاکستان کو اپنی لپیٹ میں لے رہی ہے ۔
اناطولیہ میں فلمایا گیا ”ارطغرل” سلطنت عثمانیہ کے ارطغرل غازی کا 150 اقساط کا افسانوی بیان ہے۔ اردو میں ڈبنگ کے بعد یہ سیریز پاکستانیوں کے دل میں گھر کر چکی ہے.
یہ امید بھی نہیں کی جاسکتی کہ کسی دور دراز کے ملک میں لاکھوں لوگوں کے تصورات کو اپنی گرفت میں لیا جائے۔
لیکن پاکستان اس سے مختلف ہے۔ خاندان کے خاندان ایک ساتھ بیٹھ کر بڑے انہماک سے اطغرل دیکھتے ہیں اور یہ سمجھ بیٹھے ہیں کہ یہی حقیقی تاریخی اسلام ہے ۔
اسلامی تاریخ ؟ یہ کیسی تاریخ ہے؟ درحقیقت یہ تیرہویں صدی کے اناطولیہ کاایک خیالی قصہ ہے ۔جس میں پاکستانیوں کی دلچسپی گہری ہوتی جارہی ہے ۔ اس سیریز کے لکھاری اور پروڈیوسر مہت بوزدگ نے اس قصے میں خیال آرائی کا اعتراف کیا ہے ۔
مہت بوزدگ کہتے ہیں جو مواد ہم پیش کر رہے ہیں اس کے بارے میں بہت کم معلومات موجود ہیں ۔ یہ چار سے پانچ صفحات سے زیادہ نہیں۔
دستیاب ناموں کے بھی درست ہونے کی کوئی گارنٹی نہیں ۔ ریاست عثمانیہ کے قیام کے بارے میں لکھی جانے والی تحاریر سو سے ڈیڑھ سو سال بعد جمع کی گئیں ۔
اس تاریخی اعداد و شمار میں کچھ بھی یقینی نہیں ۔ مہت بوزدگ کےمطابق ہم خواب دیکھ کر کہانی تشکیل دے رہے ہیں۔
ترک سیریز کو کمال مہارت سے ایک خاص مقصد کے لئے تیار کیا گیا ہے جس میں پروپیگنڈا کا عنصر واضح دکھائی دیتا ہے ۔ اس میں کوئی شک نہیں اس تیاری میں ایک مقصد پوشیدہ ہے ۔۔ مگر وہ کیا ہے؟
اگر اس سیریز میں اسلام کی عکاسی کرنے کی کوشش کرتے ہوئے یہ ثابت کیا گیا ہے کہ یہ دین امن کا ہے توعملی طور پر اس سیریز میں ایسا دور دور تک کچھ نہیں ۔
دوسری جانب اگر کوئی کہے کہ اس سیریز سے اسلامو فوبیا کا اثر زائل کرنے کی کوشش کی گئی ہے تو کامیابی اس کے بالکل الٹ ہوگی ۔
مثال کے طور پر پہلی قسط کا آغاز ہی خون ریزی سے ہوتا ہے ۔ جہاں خانہ بدوش خیموں کے پس منظر میں تلواریں تیار کی جا رہی ہوتی ہیں ۔
قبیلے کے مخالفین عیسائی اور بازنطینی ہیں جن کی خون آلود لاشیں یہاں اور ہر لڑائی کے بعد بکھر جاتی ہیں ۔ ہیرو ارطغرل غازی سب کے سر قلم کرتا دکھائی دیتا ہے۔ ہیرو کو قبیلے سے تعلق رکھنے والے سابق ساتھیوں کی بے وفائی کا بھی شبہ ہوتا ہے ۔
کیا اسلام کی ترجمانی کےلئے ارطغرل ہی بچا تھا؟
بے دریغ گردنیں اتارنے جیسا کلچر تو پوری دنیا نے ابوبکر البغدادی کی داعش نامی تنظیم میں دیکھ ہی لیا ۔ کیا اس سیریز میں ایسے خوفناک رجحان کی حمایت کی جا سکتی ہے ؟
مزید یہ کہ کیا اس خونریزی سے اسلام کا پر امن پیغام دنیا کو دکھایا جاسکتا ہے ؟قبائلی معاشرے میں اقتدار کی جدوجہد پر روشنی ڈالنے سے کہیں زیادہ مثبت طریقوں سے اسلام کی نمائندگی کی جاسکتی ہے۔
مثال کے طور پر، ترک کرد علماء جیسے علی قشگی ، تقی الدین یا الجزاری سے کہیں زیادہ بہتر ترجمانی ہو سکتی ہے ۔ اسلام کے ابتدائی سکالروں کے بغیر مسلم ثقافت کی رنگین طباعت ایک خام خیالی کے سوا کچھ نہیں۔
اس خاص سوچ نے اسلام جیسی ایک عظیم عالمی تہذیب کو کمزور اور غیر متضاد انداز فکرمیں الجھا کررکھ دیا ہے ۔
مجھے شبہ ہے کہ ارطغرل کا اصل مقصد اسلام کے بارے میں کم ہے ۔ یہ یقینی طور پر ایک طویل گمشدہ سلطنت کے لئے ترک پرانی یادوں کا راستہ نکالتا نظر آ رہا ہے۔
پروڈکشن ٹیم نے ترک ریاست سے بڑے پیمانے پر مالی اعانت کا مطالبہ کیا جس پر عمل کیا گیا۔ گھوڑوں کا فارم تیار کیا گیا ۔
اس کے ساتھ ساتھ ایک خاص چڑیا گھر بنایا گیا۔ ایکشن ، مار دھاڑ کی ماہر ہالی وڈ سٹنٹ ٹیم کو خصوصی طورپر بلوایا گیا ۔
یوں ایکشن کے لئے ان اداکاروں کو مکمل تربیت دی گئی ۔ ترک صدر اردگان اور ان کے اہل خانہ نےمتعدد مرتبہ فلم کی شوٹنگز لوکیشن پر جا کر دیکھیں۔
پھر وہی ہوا جس کا امکان تھا۔۔
عرب دنیا ارطغرل کو نہیں مانتی ۔۔
اسلام کے سنی مسلک کے قلعوں کے اندر سے ہی اس بلاک بسٹر پر شدید ردعمل سامنے آیا۔ متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب دونوں نے اس سیریز کی مذمت کی اور اس پر پابندی عائد کردی۔
مصری حکام نے فتویٰ جاری کیا کہ یہ ترکی کے اقتدار کو دوبارہ مسلط کرنے کی گھناؤنی حرکت ہے۔ یہ بھی اطلاعات ہیں کہ سعودی عرب بھی اس کا توڑ نکالنے کے لئے جتن کر رہا ہے ۔
سعودی سیریز کا ٹریلر بھی تیار ہو چکا ہے۔ یوں یہ ثابت ہوتا نظرآ رہا ہے کہ عرب اس “ترک اجارہ داری ” کو قبول کرنے کے موڈ میں نہیں۔
زیادہ تر لوگ حملہ آوروں کو پسند نہیں کرتے ، لیکن پاکستان کی نفسیات کسی نہ کسی طرح الگ تھلگ ہی ہیں۔
شاید اردگان کے جارحانہ انداز سے مغلوب ہوکر ، وزیر اعظم خان نے فخر کے ساتھ ٹویٹ کیا تھا کہ ترکوں نے 600 سال ہندوستان پر حکومت کی۔
یہ صرف سہ ماہی سے آدھے سچ کے درمیان ہے۔ لیکن وزیر اعظم کے لئے اپنی سرزمین پر شاہی حکمرانی کا خیرمقدم بڑا واضح ہے ۔
خان تنہا نہیں ہیں۔ پاکستانیوں کی بڑی تعداد نے آٹھویں صدی کے بعد کے تمام حملے بطور جشن اپنا رکھے ہیں۔ عرب ہندوستان کی فتح کا ذریعہ ہیں۔ ہمارے نسیم حجازی کی طرح فلمساز مہمت بزدگ بھی حقائق سے بے پرواہ منظر کشی کی تخلیق میں ہیں۔
کسی بھی فرد کو قدیم حملوں اور سامراجی فتوحات کو کس طرح دیکھنا چاہئے؟ ان کی تعریف کرنا یا ان کی بےحرمتی کرنا بھی اتنا ہی غیر معقول ہے۔
ہندوستان اس کی ایک حیرت انگیز واضح مثال ہے کہ اگر معاشرے نے ایسا کیا تو کتنا انحطاط پیدا کرسکتا ہے۔
ہندو احیاء پسندی کا کام بدکردار غیر ملکی حملہ آور پر طاری ہے جس نے مدر انڈیا کی جنت کو بکھیر دیا۔ اچانک تمام مسلمان اور مسیحی ناگوار ہوگئے۔
جیسا کہ حال ہی میں نریندر مودی کے دائیں ہاتھ کے آدمی نے اعلان کیا ، غیر ملکی دیمک ہیں جو ایک غریب آدمی کے اناج کی دکان پر حملہ کر رہے ہیں۔
کیا ہندوتوا کے بے وقوف نظریات نہیں جانتے کہ افریقہ میں ہی تمام انسانی تہذیب کا آغاز ہوا تھا ؟ “ہندوستانی سرزمین کے بیٹے” جیسی کوئی چیز نہیں ۔
کیا سب یہ نہیں جانتے کہ دُنیا کا ہر ایک معاشرہ ہزاروں سالوں سے لاتعداد تنازعات ، جنگوں اور غیر ملکی حملوں کا نتیجہ ہے؟ حتیٰ کہ ڈی این اے ٹیسٹ بھی ہندوؤں اور مسلمانوں کے مابین فرق نہیں بتاسکتے۔
یہ بنیادی اسباق سب کے لئے ہیں ۔ مگر بدقسمتی سے پاکستان کے حکمران ان حقائق سے کوسوں دور ہیں ۔
قدیم غیر ملکی حملوں کے بارے میں ایک پختہ رویہ یہ ہونا چاہیئے کہ انہیں تاریخی حقائق کے طور پرقبول کیا جائے۔
ان کی تحقیقات کی جانی چاہئیں بغیر کسی تسبیح اور مذمت کے ۔ کوئی بھی اپنے باپ دادا کے اعمال کا خمیازہ نہیں بھگت سکتا ۔
مزید برآں وقت کی چھوٹی چھوٹی باتوں نے ہمیشہ سے حقائق کو نظریہ سے پوشیدہ کردیا ہے۔
ارطغرل کے تخلیق کار چاہتے ہیں کہ ہم دوسروں کے ماضی کی شانوں میں ڈوب جائیں اور سامراجیت کا جشن منائیں۔
ہم دانستہ طور پرسب کچھ درہم برہم کر رہے ہیں ۔ اس زہریلے مادے سے صرف اس خطرناک فریب کو تقویت مل سکتی ہے کہ آگے بڑھنے کا مطلب اصل میں پیچھے جانا ہے ۔
ان تمام فضولیات کے بجائے آگے جانے کا راستہ یہ ہے کہ پاکستانی بہار کا راستہ پاکستانیوں سے ہی پوچھ لیں ۔ہمارے منفرد کلچر ہیں ، تاریخ ہے ۔ اس تنوع سے بہت کچھ مل سکتا ہے ۔
سال 1971 ء میں جو ہوا سب نے دیکھا۔ سعودی عرب کی ثقافت کا خاتمہ ایک قابل عمل پاکستانی شناخت بنانے میں ناکام رہا۔ ترکی کو قبول کرنے سے ہمیں مزید کچھ حاصل نہیں ہوگا۔
اس کے بجائے ایک مضبوط قومی شناخت تب ہی سامنے آسکتی ہے جب پاکستانیت کو قبول کیا جائے ۔ مثال کے طور پر یہ تسلیم کیا جائے کہ پنجاب صرف ایک پاکستانی صوبہ ہے اور تمام شہریوں کو مساوات اور انصاف کی بنیادوں پر حقوق حاصل ہیں۔ تاہم فی الوقت کچھ بدلتا نظر نہیں آرہا۔۔

اپنا تبصرہ بھیجیں