مطالبات کی منظوری تک حکومت کے ساتھ مزاکرات نہیں ہونگے، سرکاری ملازمین اتحاد

آل گورنمنٹ ایمپلائز گرینڈ الائنس کے پلیٹ فارم سے تمام سرکاری ملازمین کا چترال پائین میں احتجاجی مظاہرہ اور جلسہ

رپورٹ: گل حماد فاروقی

چترال: سرکاری ملازمین اپنے مطالبات کے حق میں مظاہرہ کر رہے ہیں۔

چترال: سرکاری ملازمین کی تنظیموں کے اتحاد نے فیصلہ کیا ہے کہ حکومت کے ساتھ مذاکرات کا کھیل نہیں کھیلا جائے گا.
یہ فیصلہ منگل کے روز سرکاری ملازمین کی تنظیموں کی جانب سے اپنے مطالبات کے حق میں یہاں ایک اسکول کے سامنے احتجاجی جلسہ اور مظاہرہ میں کیا گیا۔

جلسہ کی صدارت AGEGA چترال پائین کے صدر امیر الملک نے کیا جبکہ پیرا میڈیکل ایسوسی ایشن کے صدر جمال الدین اور دیگر عہدہ داران بھی نے احتجاجی ملازمین سے خطاب کیا۔

احتجاجی مظاہرے میں تمام انجمنوں کے قائدین نے متفیقہ فیصلہ کیا کہ اب مذاکرات کا وقت گزر چکا ہے. مزید مذاکرات کا کھیل نہیں کھیلا جائیگا۔

مقررین نے کہا کہ ان کے مطالبات کی منظوری کے نوٹیفیکیشن جاری کرنے پر بات ہوگی۔

مظاہرے میں مشترکہ چارٹر آف ڈیمانڈ بھی جاری کیا گیا. جس کے مطابق تمام ایڈہاک ریلیف کو بنیادی تنخواہ میں ضم کرکے پے سکیل میں ترمیم اور مہنگائی کے تناسب سے تنخواہوں میں اضافہ کیا جائے۔

ایک متفقہ قرارداد کے ذریعے حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ میڈیکل الاؤنس اور کنونس الاونس میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ کیا جائے۔

یوٹیلیٹی الاؤنس، ایگزیکٹیو الاؤنس، ٹیکنیکل الاؤنس، ٹیچنگ الاؤنس مساوی بنیادی پر تمام سرکاری ملازمین کو بلا تفریق یکسان ایک جیسا دیا جائے۔
قرارداد میں مطالبہ کیا گیا کہ تمام ملازمین کو بلا تفریق جدید ٹائم اسکیل دیا جائے، تمام ملازمین کو ہاؤس رینٹ الاؤنس جاری بنیادی تنخواہ پر بلا تفریق پچاس فی صد دیا جائے۔ ایڈہاک ازم اور کنٹریکٹ پالیسی کا خاتمہ کیا جائے۔ ملک بھر میں سامراجی مالیاتی اداروں ائی ایم ایف کی ملازمین اور محنت کش دشمن پالیسیوں کو ختم کیا جائے۔
احتجاجی جلسہ میں کثیر تعداد میں ملازمین نے شرکت کی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں