موڑکہو تھانے کے حدود میں تین سال کے بچے کے ساتھ جنسی زیادتی کا واقعہ

موڑکہو تھانے کے حدود تین سال کے بچے کے ساتھ جنسی زیادتی کا واقعہ
رپورٹ:کریم اللہ
اپر چترال موڑکہو تھانے کے حدود میں تین سالہ بچے کے ساتھ درندہ خصلت انسان نے جنسی زیادتی کی ، جسے انتہائی تشویش ناک حالت میں ٹی ایچ کیو ہسپتال بونی لایا گیا ۔ جہاں ابتدائی طبی امداد کے بعد بچے کو ڈی ایچ کیو ہسپتال چترال ریفر کیا گیا ۔ یہ واقعہ 16 دسمبر 2019ء کو پیش آیا جب ہم نے اس سلسلے میں بچے کے خاندان سے رابطہ کیا تو فیملی کے ایک اہلکار نے بتایا کہ بچے کی عمر صرف تین سال ہے جو گھر سے باہر نکلی تو گھر کے قریب ہی دکان میں موجود دکاندار نے انہیں اپنے پاس بلایا اور وہاں اس کے ساتھ جنسی بدفعلی کی جس کے باعث بچے کو شدید چوٹین آئی اور وہ درد سے رونے لگا اس کے بعد دکاندار نے اسے مٹھائیاں دے کر گھر بھیج دیا گھر آکر بچے نے اپنی ماں کو ساری صورتحال بتایا دیا بچے کے متاثر جگہے سے مسلسل خون بہہ رہا تھا تو اسی حالت میں اس بچے کو ٹی ایچ کیو ہسپتال بونی لایا گیا ۔ جہاں ڈاکٹروں نے ابتدائی طبی معائنے اور علاج کے بعد مزید ٹسٹ وغیرہ کے لئے ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہستپال چترال ریفر کردیا گیا ۔ ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال چترال کے ڈاکٹر کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بچے کے متاثرہ جگہ میں شدید چوٹین آئی ہے بلکہ وہ جگہ پھٹ چکا ہے اسی میڈیکل رپورٹ میں بھی بچےکی عمر محض تین سال بتایا گیا ہے ۔

اس سلسلے میں پولیس کی جانب سے نامزد ملزم واسع الرحمن کے خلاف دفعہ
377/53cp
کے تحت ایف آئی آر درج کرکے ملزم کو گرفتار کیا ہے ۔


اپنا تبصرہ بھیجیں