139

گلگت بلتستان اور موسمیاتی تبدیلی

عابدہ خانم


روئے زمین پر جیسے جیسے انسان فطرت کے نظام میں خلل ڈالتا آیا ہے ویسے ویسے قانون فطرت کسی زخمی ناگن کی طرح پلٹ پلٹ کر مختلف قدرتی آفات کی شکل میں انسان پر وار کرتا آیا ہے۔ اگرچہ انسانوں کی ایک کثیر تعداد شہروں میں آباد ہے اور وہی پر ہی فیکٹریوں اور دیگر مشینری سے خارج ہونے والا دھواں ماحول کو سب سے زیادہ متاثر کر رہا ہے تاہم اس کے مضر اثرات کا شکار وہ لوگ بھی ہو رہے ہیں جو دہی علاقوں میں رہائش پذیر ہیں ۔ ہر سال پہلے سے زیادہ گرمی، بے وقت بارشیں اور برفباری سے نظام زندگی اکثر اوقات مفلوج ہوجاتی ہے۔ گلگت بلتستان جسے پاکستان میں رہنے والے شمالی علاقہ جات بھی کہتے ہیں گزشتہ سالوں سے سخت موسمیاتی تبدیلی کا شکار ہے
اس کی سرحدیں جنوب میں آزاد کشمیر، مغرب میں صوبہ خیبر پختونخواہ، شمال میں افغانستان کے واخان کوریڈور، مشرق اور شمال مشرق میں چین کے سنکیانگ علاقے اور ہندوستان کے زیر انتظام مرکز کے زیر انتظام علاقوں جموں و کشمیر اور لداخ سے ملتی ہیں۔
اقوام متحدہ اور دیگر بین الاقوامی تنظیموں کے مطابق یہ خطہ بمعہ آزاد کشمیر انتظامی طور پر پاکستان زیر تسلط ہے ۔ موجودہ گلگت بلتستان کا علاقہ 1970 میں "شمالی علاقہ جات” کے نام سے ایک الگ انتظامی یونٹ بن گیا۔ یہ سابقہ گلگت ایجنسی، بلتستان ضلع، اور کئی چھوٹی سابقہ ریاستوں کو ملا کر تشکیل دیا گیا تھا، جن میں سب سے بڑی ہنزہ اور نگر تھیں۔ 2009 میں، اس خطے کا نام بدل کر "گلگت بلتستان” رکھ دیا گیا اور سیلف گورننس آرڈر کے ذریعے اسے محدود اور نام نہاد خود مختاری دی گئی۔
گلگت بلتستان کی آبادی 2017 کے مطابق 1,492,924 ہے۔ گلگت بلتستان کی آبادی بہت سے متنوع لسانی، نسلی اور مذہبی فرقوں پر مشتمل ہے، جس کا ایک حصہ دنیا کے بلند ترین پہاڑوں سے الگ ہونے والی بہت سی الگ تھلگ وادیوں کی وجہ سے ہے۔ نسلی گروہوں میں شن، یشکن، کشمیری، کاشگری، پامیری، پٹھان اور کوہستانی شامل ہیں۔ گلگت بلتستان سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی ایک خاصی تعداد پاکستان کے دیگر حصوں خصوصاً پنجاب اور کراچی میں مقیم ہے۔ گلگت بلتستان کی شرح خواندگی تقریباً 72 فیصد ہے۔
گلگت بلتستان میں دنیا کی کم از کم بیس ایسی چوٹیوں کا مسکن ہے جو کہ 6,100 میٹر (20,000 فٹ) بلند ہیں،جن میں K-2 دنیا کی دوسری بلند ترین چوٹی بھی شامل ہے ۔ دیگر معروف چوٹیوں میں مشبروم (جسے کے۔ ون بھی کہا جاتا ہے)، براڈ پیک، پوشیدہ چوٹی، گاشربرم- II، گاشربرم IV، اور چوگولیسا شامل ہیں، جو خپلو وادی میں واقع ہیں۔ دریائے گلگت دریائے سندھ کا ایک معاون دریا ہے اور شندور جھیل سے شروع ہو کر جگلوٹ اور بونجی کے دیہات کے قریب دریائے سندھ میں جا ملتا ہے۔ گلگت میں 120 سے 240 ملی میٹر سالانہ تک کم بارش ہوتی ہے۔
2021 موسمیاتی تبدیلیاں اور اس کے اثرات دنیا بھر میں دیکھے جا سکتے ہیں اور گلگت بلتستان بھی ان اثرات سے محفوظ نہیں ہے۔ جرنل آف نیچرل سائنس ایڈوانسز کے گزشتہ سال کے شمارے کے مطابق موسمیاتی تبدیلیاں ہمالیائی گلیشیئرز کو کھا رہی ہیں۔ اہم خطرہ یہ ہے کہ یہ پگھلتے ہوئے گلیشیئر جھیلوں اور ندیوں میں جمع ہو گئے ہیں جو باہر بہہ سکتے ہیں اور سیلاب کا باعث بن سکتے ہیں۔ یہاں 3000 برفانی جھیلیں ہیں اور ان میں سے 33 قدرتی طور پر تباہ کن ہیں۔ درجہ حرارت میں اضافہ تیزی سے گلیشیئر پگھلنے کا باعث بنتا ہے، جس کے نتیجے میں سیلاب اور برفانی جھیلیں پھوٹ پڑتی ہیں۔ گھانچے علاقے کے میں شدید بارش اور گلیشیئر پگھلنے سے مختلف گاؤں میں سیلاب آ چکا ہے۔ مستقبل میں گلیشیل لیک آؤٹ برسٹ فلڈز مزید گلیشیئرز پگھلنے سے اس طرھ کی اور بھی تباہ کاریاں متوقع ہیں ۔ پگھلتے ہوئے گلیشیئر پورے گلگت بلتستان میں سیلاب کا باعث بن سکتے ہیں۔ 8 مئی 2022 کو شیشپر گلیشیر نے ہنزہ میں سیلاب کی شکل میں لوگوں کی املاک کو تباہ کردیا۔ 30 جولائی 2021 کو سیلاب میں 3 لڑکیاں لقمہ اجل بن گئیں۔
خطے میں غیر متوقع برف باری لوگوں کی جان لے سکتی ہے اور سڑکیں اور پل تباہ کر سکتی ہے۔ اپریل کے مہینے میں بھی برفانی طوفانوں کی شدت اور تعدد میں اضافہ ہوسکتا ہے۔ اس سے سیاحت کی صنعت، ٹرانسپورٹ کی صنعت متاثر ہوتی ہے اور معاشی تباہی ہوتی ہے۔ ضلع غذر کا معروف گاوں شیر قلعہ میں 5 جولائی 2022 کو آنے والے سیلاب نے چار قیمتی انسانی زندگیوں کو نگل لیا 250 سے زائد گھر تباہ ہوگئے کئی لوگ بے گھر ہوگئے اور بہت سارے آباد زمیں برباد ہوگئی۔
ایسے خطرے سے دوچار خطے میں موسمیاتی تبدیلیوں کے منفی اثرات کی وجہ سے، بہت سے لوگوں کے پاس دوسرے شہروں میں منتقل ہونے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہوگا جس کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر نقل مکانی ہوگی۔ بہت سے مقامی لوگ روزگار کے مواقع کی کمی کی وجہ سے پہلے ہی شہروں کا رخ کر رہے ہیں، جس سے میٹروپولیٹن شہروں پر زیادہ دباؤ پڑتا ہے جو پہلے ہی اپنی گنجائش سے زیادہ لوگوں کی میزبانی کر رہے ہیں۔ موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے یہ تمام سیلاب اور لینڈ سلائیڈنگ مٹی کے کٹاؤ کا باعث بنتے ہیں۔اس سے درختوں کی کٹائی اور پودوں کے نقصان سے زرخیز مٹی اور زیر زمین یا اوپر والی مٹی کا نقصان ہوتا ہے، جس سے مقامی زراعت پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ 2005 سے اوسطاً، گلگت بلتستان میں 7.54 ± 20.25 ٹن/ہیکٹرفی سال مٹی کا کٹاؤ رپورٹ ہوا، جس کے نتیجے میں 2015 میں 9.06 ±29.69 ٹن/ہیکٹر تک بڑھ گیا۔ سب سے زیادہ متاثر وادی شگر ہوا ہے۔
بدلتی ہوئی آب و ہوا، گلوبل وارمنگ، کم ہوتے ہوئے گلیشیئرز، سخت موسمی واقعات اور قدرتی آفات کی بڑھتی ہوئی تعداد کے ساتھ ساتھ بشریاتی سرگرمیوں کے نتیجے میں مارکوپولو، آئی بیکس، آسٹور مارخور جیسی انواع کے مسکن خطرے سے دوچار ہیں۔ برفانی چیتے جو کہ ہمالیہ کی خوبصورتی ہے کو بھی خطرے میں ڈال دیا گیا ہے کیونکہ وہ خوراک کے لیے مذکورہ انواع پر انحصار کرتے ہیں جوکہ اب 300-400 ہی رہ گئے ہیں۔
چین پاکستان اقتصادی راہداری کے بارے میں عمومی جائزہ اور گلگت بلتستان میں موسمیاتی تبدیلیوں پر اس کے اثرات بہت اہم مسائل ہیں۔ لیکن اس خطے کے ساتھ ساتھ پاکستان اور چین میں موسمیاتی تبدیلیوں پر بات چیت اور تحقیق و طویل مدتی اثرات کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کی ضرورت ہے۔ سی پیک کا منصوبہ، ماحولیاتی سیکٹر میں کسی بھی ماحولیاتی منصوبہ بندی کے بغیر چاراگاہوں کا نقصان، جنگلی حیات کا خاتمہ، چراگاہوں میں کم گھاس، جنگلی جانوروں میں زیادہ بیماریاں، کیڑوں کے حملے، گلیشیئرز کے پگھلنے کی شدت میں اضافہ کا باعث ہو گا۔ اس کے علاوہ فقط سرمایہ کاری اور منافع کو مدِ نظر رکھ کر شروع کئے گئے اس منصوبے سے آبی ذخائر میں گندگی، گرمی کی شدید لہریں، سرد موسم، خشک سالی، متعدی بیماریوں کا پھوٹ پڑنا، لینڈ سلائیڈنگ، پانی سے پیدا ہونے والی وبائی بیماریاں، برفانی تودے، شدید بارشیں، شدید برف باری، جھیلوں کا سیلابی ریلے کی شکل اختیار کرنا، سماجی انفراسٹرکچر کو درہم برہم کرنے کے ساتھ ساتھ ایک مقامی لوگوں کے لئے ایک بے سود معیشت ثابت ہو سکتا ہے۔
حکومت کو چاہیے کہ وہ گلگت بلتستان کے خطہ میں موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کرنے پر توجہ مرکوز کرے جو کہ موسمیاتی تبدیلیوں اور اس کے منفی اثرات کے لحاظ سے ملک کے سب سے زیادہ خطرے والے خطوں میں سے ایک ہے۔
جی بی کی کمیونٹیز پسماندہ اور غریب ہیں، وہ موسمیاتی تبدیلیوں جیسے سیلاب اور خشک سالی کی وجہ سے ہونے والے بڑے تباہ کن واقعات اور ان کی وجوہات سے قاصر سے ہیں۔ کے حھ کے ساتھ ہی ھ ھھھ انہیں اپنی صلاحیتوں استعفادہ حاصل کرنے اور آگے بڑھنے کے لئے طویل مدتی منصوبوں کی ضرورت ہے۔ گلگت بلتستان میں زندگی گزارنے والے لوگوں کی زندگی کو بہتر بنانے کے لئے نیز ماحولیاتی نظام، حیاتیاتی تنوع اور انفراسٹرکچر کو بچانے کے لیے طویل مدتی منصوبے یا کمیونٹی بیسڈ ڈیزاسٹر رسک مینجمنٹ اور لوگوں میں ماحول دوست شعور کو بڑھانے والی سرگرمیاں کی اشد ضرورت ہے۔
اگر سی پیک کو دنیا کو مجموعی ترقی کے پیش نظر کے طور پر دکھانا ہے تو چین اور پاکستان کی حکومتوں کو گلگت بلتستان کے لوگوں کو ماحولیاتی تحفظ اور سہولیات فراہم کرنے کی ضرورت ہے۔ بصورت دیگر پاکستان کی مستقبل کی ترقی کے لیے ایک انتہائی اہم علاقے میں فی الوقت ایک خاموش آواز خطرے کا زون بن کر ابھرےسکتا ہے۔
حکومت اور حکام سیاحت کے شعبے اور ٹرانزٹ ٹریڈ دونوں میں پائیدار ترقی کی طرف بڑھیں گے۔ اور وہ قدرتی وسائل کو دو ٹوک طریقے سے استعمال نہیں کریں گے اور ہماری آنے والی نسلوں کے لئے ناکافی کا آغاز کریں گے۔ گرین ہاؤس کے اخراج کو فطرت کی ہم آہنگی کی صلاحیت تک کم کیا جانا چاہیے۔ توانائی کی پیداوار کو قابل تجدید ذرائع پر منتقل کیا جانا چاہیے۔ علاقائی معیشت اور گھریلو ضروریات کے دائرے میں کسی بھی فیصلے سے پہلے ماحولیاتی تحفظ کو ترجیح دی جانی چاہیے۔
اگرچہ گلگت بلتستان کے لوگ خواندگی کی شرح 72 فیصد کے ساتھ اچھی طرح سے تعلیم یافتہ ہیں، پھر بھی وہ موسمیاتی تبدیلی اور گلوبل وارمنگ کے اثرات سے لاعلم ہیں جو زیادہ تر حکومتی حمایت یافتہ منصوبوں اور انفراسٹرکچر کی وجہ سے پیدا ہوتے ہیں۔ انہیں اس قدرتی اور انسان ساختہ "ماحولیاتی تبدیلی” کے بارے میں آگاہی دینے کی ضرورت ہے ، تاکہ ہماری آنے والی نسل کو موسمیاتی تبدیلیوں سے ہونے والی غربت اور تباہی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں