125

مغربی پابندیوں سے یوکرین کا بحران حل نہیں ہو گا

یوکرائین اور روس کے درمیان علاقائی تناو کے نتیجے میں امریکی سامراج اور اس کے اتحادیوں کو ایک بار پھر موقعہ فراہم ہوا ہے کہ وہ جنگ کا ڈھنڈورا پیٹیں اور روس کو دباو میں لا کر روس کے عین بارڈر پر اپنے لئے اسپیس بنانے میں کامیاب ہوں اور روس کے بارڈر پر پہنچ کر روس کا دفاعی نظام درہم برہم کر سکیں
۔ ماسکو کی سٹریٹجک جگہ کو نقصان پہنچانے کے لیے واشنگٹن کی انتھک کوششوں نے کشیدگی کو ایک نئی بلندی تک پہنچا دیا ہے۔ روس کی طرف سے لوہانسک عوامی جمہوریہ اور ڈونیٹسک عوامی جمہوریہ کو آزاد اور خودمختار ریاستوں کے طور پر تسلیم کرنے کے بعد کئی مغربی ممالک – برطانیہ، جرمنی، جاپان، وغیرہ – کریملن پر امریکی زیرقیادت پابندیوں میں شامل ہو رہے ہیں۔ لیکن کیا پابندیاں، محاذ آرائی، یا یہاں تک کہ خطے میں اضافی فوجیوں کی تعیناتی، موجودہ دلدل کا مثالی حل ہے؟ یوکرین اور روس کے درمیان الجھاؤ، سب سے پہلے، تاریخ سے بچا ہوا ہے جسے ماسکو اور کیف کے درمیان حل کرنے کی ضرورت ہے -نہ کہ دو متنازعہ فریقوں کے بجائے بیرونی قوتیں درمیان آ کر اس تضاد کو مزید بڑھاوا دیں۔۔
پیر کو اپنی ایک گھنٹے کی ٹیلیویژن تقریر میں، پوتن نے یوکرین کے بارے میں روس کے موقف کی وضاحت کی -پوٹن نے کہا کہ یو کرائن ملک "تاریخی طور پر روسی سرزمین” تھا جسے "مکمل طور پر روس نے، زیادہ واضح طور پر، بالشویک، کمیونسٹ روس” نے 1917 کے انقلاب کے بعد بنایا تھا۔ "بالشویک پالیسی کے نتیجے میں، سوویت یوکرین نے جنم لیا، جسے آج بھی معقول وجہ کے ساتھ ‘ولادیمیر ایلیچ لینن کا یوکرین’ کہا جا سکتا ہے۔ وہ اس کے مصنف اور معمار ہیں۔ اس کی تصدیق آرکائیو دستاویزات سے پوری طرح ہوتی ہے۔” پیوٹن نے یوکرائنی تاریخ کے روس کے ورژن کو واضح کیا۔ پوتن کے یوکرائنی ہم منصب ولادیمیر زیلینسکی اپنے ملک کی تاریخ کی مختلف تشریح پیش کر سکتے ہیں۔ لیکن اگرچہ دونوں ورژن مخالف ہیں، جدید یوکرین کی ابتداء کے تنازعات کو روس اور یوکرین کے درمیان چھوڑ دینا چاہیے۔ متعلقہ فریقوں کے درمیان براہ راست مذاکرات اور گہری سفارت کاری کی ضرورت ہے۔ بیرونی قوتوں کی طرف سے کوئی بھی مداخلت پہلے سے نفیس معاملہ کو ہی پیچیدہ بناتی ہے۔ تاریخ کو کوڑے مارنے کے بجائے، امریکہ اور نیٹو کو ایک قدم پیچھے ہٹنا چاہیے تاکہ روس اور یوکرین کو اپنی تاریخی الجھن کو دور کرنے کے لیے کافی گنجائش مل سکے۔امریکی سامراج خطے میں امن و استحکام کا نعرہ لگاتا ہے لیکن اس کے برعکس کام کر رہا ہے۔ ماسکو-کیف کے تاریخی مسئلے کا بحران کی طرف بڑھنا، اور اب یہاں تک کہ جنگ کے دہانے پر پہنچنا بھی امریکی قیادت میں نیٹو کی توسیع اور واشنگٹن کی مداخلت کا براہ راست نتیجہ ہے۔ 1990 میں 17 ممالک سے 30 تک مغربی فوجی بلاک کی توسیع، جس میں بہت سے امریکی فوجی اڈے ہیں، بلاشبہ روس کے اسٹریٹجک معاملات کے لئے بہت بڑا خطرہ ہے ، اس طرح کریملن کی بے چینی کی سطح کو بڑھا رہا ہے۔ یوکرین کی نیٹو کی رکنیت کے لیے واشنگٹن کی عوامی حمایت نے روس کی اپنے پڑوسی کے بارے میں چوکسی اور مغرب پر عدم اعتماد کو مزید تیز کر دیا ہے۔ اس کے بعد، بائیڈن انتظامیہ نے روس اور نیٹو کے درمیان دشمنی کو بڑھاتے ہوئے، ماسکو کے حملے کے لیے ایک تاریخ – 16 فروری کا انتخاب کیا۔ اب، امریکہ نے، ماسکو کے "ابتدائی حملے” کو مسترد کرتے ہوئے، نئی پابندیوں کی نقاب کشائی کی ہے

اب، امریکہ نے، ماسکو کے "ابتدائی حملے” کو مسترد کرتے ہوئے، روس پر نئی پابندیوں کی نقاب کشائی کی اور خطے میں اضافی فوجی بھیجنے کا وعدہ کیا۔ کیا ان کوششوں سے کشیدگی میں کمی آئے گی؟
واشنگٹن کی بار بار کی مداخلت کے نتائج پہلے ہی ثابت نہیں ہوئے: روس اور یوکرین کے درمیان تاریخی الجھن 2014 کے بحران میں تبدیل ہوئی، اور اب فوجی تعطل کی طرف – امریکہ کی "امن برقرار رکھنے” کی کوششوں کی بدولت۔ اس دوران، بائیڈن انتظامیہ نے روس کو بین الاقوامی سطح پر مزید الگ تھلگ کرنے، امریکہ پر نیٹو کے فوجی انحصار کو تیز کرنے، اور اس سال کے وسط مدتی انتخابات کے قریب آتے ہی عوام کی توجہ گھریلو سر درد سے ہٹانے میں کامیاب ہو گئی ہے۔ واشنگٹن کا وہی پرانا حربہ کئی بار دوسری جگہوں پر بھی لاگو ہو چکا ہے۔ امریکہ نے عراق، شام، لیبیا اور افغانستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت کی اور ان پر پابندیاں عائد کیں، جن میں سے چند ایک ہیں – ان سب کا نتیجہ یہ نکلا کہ علاقائی ممالک بدحالی کی کھائی میں دھکیل رہے ہیں اور معاشی اور سیاسی فائدے میں حتمی فاتح امریکہ ہے۔ پیچھے ہٹنا اور روس اور یوکرین کو اپنے تنازعات کو حل کرنے کے لیے کافی گنجائش دینا ہی امن کے لیے آگے بڑھنے کا واحد راستہ ہے۔ دونوں فریقین نے اپنے اپنے مطالبات کا اظہار کیا ہے۔ اگرچہ ابھی تک کوئی اتفاق رائے نہیں ہوسکا ہے، لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ جنگ ہی واحد آپشن ہے۔ مغربی پابندیاں روس اور یوکرین کے درمیان الجھن کو آسان نہیں بنا رہی ہیں بلکہ اس طرح تناؤ کو کم کرنے میں کوئی مدد نہیں کر رہی ہیں۔ روس پر زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے کے واشنگٹن کے حربے کا نتیجہ تناؤ کے بڑھتے ہوئے سرپل کی صورت میں نکلے گا۔ تنازعات کے حل کے لیے فریقین کے درمیان براہ راست مذاکرات کی ضرورت ہے۔ امریکہ کی قیادت میں مغربی ممالک کا ایک قدم پیچھے ہٹنا اور روس پر دباؤ ڈالنا اس مسئلے کو صحیح طریقے سے نمٹانے کی شرط ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں