لیڈی ہیلتھ ورکرز کے مسائل کے حوالے سے تانگیر و چڑاس میں اہم اجلاس 137

لیڈی ہیلتھ ورکرز کے مسائل کے حوالے سے تانگیر و چڑاس میں اہم اجلاس  


ہائی ایشیاء ہیرالڈ

کور کمیٹی برائے لیڈی ہیلتھ ورکرز گلگت بلتستان کا چیئرمین ریاض الدین سب ڈویژن تانگیر میں پہنچ گیا اور لیڈی ہیلتھ ورکرز کے مسائل  کے حوالے سے ایک اجلاس کی صدارت کی  ۔ جس میں اراکین کور کمیٹی تانگیر شاہ غلام نمبردار ،صدام حسین ، مظفر ، شیر دل ، فضل الرحمن ، گل زمان ،  فضل ولی ودیگر نے شرکت کی ۔ اجلاس میں کور کمیٹی برائے لیڈی ہیلتھ ورکرز کا چیئرمین ریاض الدین کی تانگیر آمد پر خوش آمدید کہا گیا ۔

اجلاس میں کور کمیٹی گلگت بلتستان کی خدمات کو شاندار الفاظ میں خراج تحسین پیش کیا ۔

اجلاس میں لیڈی ہیلتھ ورکرز کا مسلئہ حل نہیں کرنے پر حکومت کی زیادتیوں کی مذمت کی گئی ۔ اور  متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ حکومت ہمارے مسائل کو ترجیحی بنیادوں پر  حل کریں اگر لیڈی ہیلتھ ورکرز کا جوئننگ کا مسئلہ  جلد حل نہیں ہوا تو تو آئندہ دھرنے کے لئے گلگت روانہ ہوں گے ۔

 اجلاس میں آپس میں اتحاد پیدا کرنے پر زور دیا گیا ۔ اس موقع پر  امامیہ کونسل گلگت بلتستان اور اہلسنت والجماعت گلگت بلتستان کے ذمہ داروں کی بھر پور تعاون کرنے پر شکریہ ادا کیا ۔

آخر میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ مرکزی کور کمیٹی برائے لیڈی ہیلتھ ورکرز گلگت بلتستان کے شانہ بشانہ ہوں گے اور جب بھی کال دیں گے تو ہم قراقرم ہائے وے کو مکمل طور پر بلاک کریں گے ۔

درین اثنا گلگت بلتستان کے دیگر اضلاع کے دورے کے بعد مرکزی کور کمیٹی برائے لیڈی ہیلتھ ورکرز گلگت بلتستان کے چیئرمین ریاض الدین ، وائس چیئرمین دانش ، اشفاق احمد ،  ذیشان ودیگر نے دیامر کا دورہ کیا ۔دیامر سے تعلق رکھنے والے کامیاب لیڈی ہیلتھ ورکرز کے عزیزوں نے بڑی تعداد میں اجلاس میں شرکت کی ۔ اجلاس میں لیڈی ہیلتھ ورکرز کے مسائل پر تفصیلی بات چیت کی گئی ۔ وزراء کے ساتھ ہونے والی مذاکرات کے بارے میں دیامر کے شرکاء کو آگاہ کیا گیا ۔اجلاس میں گلگت بلتستان کے دیگر اضلاع کے کامیاب دورے کے حوالے سے بھی اور مذہبی نمائندوں کی بھرپور تعاون اور یقین دہانی کے بارے میں بھی تفصیلی روشنی ڈالی گئی اور تمام مذہبی شخصیات کا شکریہ ادا کیا گیا ۔

اس کے بعد کور کمیٹی کے چیئرمین ریاض الدین کی صدارت میں یہ فیصلہ کیا گیا کہ  حکومت ہمارے جائز مطالبات وعدے کے مطابق جلد حل نہیں کیا تو اگلے لائحہ عمل پر مشاورت کرتے ہوئے تمام کامیاب لیڈی ہیلتھ ورکرز اپنے بال بچوں کے ساتھ دھرنے کے لیے گلگت کی طرف روانہ ہوں گے ۔

اجلاس کے بعد نمائندہ وفد نے دیامر چڑاس کے جید عالم مولانا مزمل شاہ صاحب سے بھی ملاقات کی ۔ اور لیڈی ہیلتھ ورکرز کے ایشوز پر تفصیلی بات چیت کی گئی ۔ مولانا مزمل شاہ نے وفد کو یقین دلایا کہ میرٹ پر آئی ہوئی لیڈی ہیلتھ ورکرز کے ساتھ زیادتی بند کیا جائے ۔ اور وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان سے مطالبہ کروں گا کہ میرٹ پر آئی ہوئی لیڈی ہیلتھ ورکرز کی جلد ازجلد جوئننگ لی جائے اور حکومت نے مسئلہ حل نہیں کیا تو اس کے خلاف بھر پور احتجاج کیا جائے گا۔

نمائندہ وفد نے دیامر علماء یوتھ کونسل کے صدر مولانا عبد المالک صاحب سے بھی ملاقات کی ۔ مولانا عبد المالک نے وفد سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ حکومت گلگت بلتستان سے مطالبہ کرتے ہیں کہ لیڈی ہیلتھ ورکرز کے ایشوز کو مزید طول نہ دیا جائے اور لیڈی ہیلتھ ورکرز کا مسئلہ جلد حل کیا جائے اور کسی کے ساتھ زیادتی برداشت نہیں کریں گے انہوں نے کہا کہ ہم حق دار کے ساتھ دیں گے ۔ حق دار کو ان کی جوئننگ لی جائے اور حکومت ایک بار پھر خواتین کو روٹوں میں آنے کی نوبت پیدا نہ کریں ۔

نمائندہ وفد نے علماء دیامر اور منتظمین کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ دیامر سے خوشگوار یادیں لے کر گلگت کی طرف جارہے ہیں ۔

کیٹاگری میں : خبر

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں