Baam-e-Jahan

سی پیک کی توسیع سے افغانستان تجارت کا مرکز بن جائے گا۔ افغان حکومت

افغانستان کے عبوری وزارت خارجہ کا بلاول بھٹو سے ملاقات

ہائی ایشیاء ہیرالڈ


افغانستان کے عبوری وزارت خارجہ کے نائب ترجمان حافظ ضیا احمد کا کہنا ہے کہ اربوں ڈالر کے بنیادی ڈھانچے کے منصوبے میں شمولیت طالبان کی سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے عزم کا حصہ ہے۔

ایک سینئر افغان اہلکار نے بتایا کہ افغانستان نے ملٹی بلین چین پاکستان اکنامک کوریڈور (CPEC) میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا ہے، جس سے خشکی میں گھرے ملک کو تجارت کا مرکز بننے اور سرمایہ کاری کو راغب کرنے میں مدد ملے گی۔

عبوری وزارت خارجہ کے نائب ترجمان حافظ ضیاء احمد نے منگل کو کہا کہ میگا انفراسٹرکچر پراجیکٹ میں شامل ہونے کا فیصلہ طالبان انتظامیہ کے جنگ زدہ ملک میں بیرونی سرمایہ کاری لانے کے عزم کا حصہ ہے۔

"CPEC ہمیں بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو (BRI) کا حصہ بننے اور افغانستان میں توانائی، ریلوے اور دیگر شعبوں میں مختلف پراجیکٹس لانے میں مدد کرے گا،” احمد نے ایک مقامی ٹیلی ویژن چینل آریانا نیوز کے ذریعے شیئر کیے گئے ایک ویڈیو بیان میں کہا۔

گزشتہ ہفتے، افغانستان کے قائم مقام وزرائے خارجہ اور تجارت نے 5 ویں چین-افغانستان-پاکستان وزرائے خارجہ مذاکرات میں شرکت کے لیے اسلام آباد کا دورہ کیا تھا۔

ملاقات کے بعد جاری کردہ ایک بیان کے مطابق، "تینوں فریقوں نے علاقائی روابط کے مرکز کے طور پر افغانستان کی صلاحیت کو مکمل طور پر بروئے کار لانے کے اپنے عزم کا اعادہ کیا۔”

انہوں نے بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو (بی آر آئی) کے تحت سہ فریقی تعاون کو آگے بڑھانے اور سی پیک کو افغانستان تک مشترکہ طور پر توسیع دینے کے عزم کا اعادہ کیا۔

سی پیک بیجنگ کے بیلٹ ایند روڈ انیشیٹیو کا حصہ، جس میں پاکستان اور چین کے درمیان اربوں ڈالر کا اقتصادی اور بنیادی ڈھانچہ کی ترقی  کے لئے کام کیا جا رہا ہے ۔

بنیادی ڈھانچے کے منصوبے میں طالبان کی زیر قیادت افغانستان کو شامل کرنے کے لیے بات چیت ہوئی ہے، اور انتظامیہ نے ملک کو وسطی اور جنوبی ایشیا کے درمیان ٹرانزٹ ہب بنانے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔

اگست 2021 میں افغانستان سے امریکی قیادت میں نیٹو افواج کے انخلاء کے بعد طالبان اقتدار میں آئے۔

بشکریہ: ٹی آر ٹی ورلڈ انگریزی

اپنا تبصرہ بھیجیں